پنجاب بھر میں تعینات کریمنل ریکارڈ والے ایس ایچ اوز کو ہٹانے کا فیصلہ

لاہور: پنجاب کے تھانوں میں ایس ایچ او کی تعیناتیوں کومزید شفاف اور میرٹ بیسڈ بنانے کے حوالے سے گائیڈ لائنز جاری
لاہور: آئی جی پنجاب نے یہ گائیڈ لائنز سنٹرل پولیس آفس میں منعقدہ اجلاس کے دوران جاری کیں۔
لاہور: گائیڈ لائنز کا مقصد قابل، ایماندار اور بہترین شہرت کے حامل افسران کی خدمات سے استفادہ کرنا ہے۔
لاہور: ایسے افسران جن کے خلاف کریمنل کیسز زیر سماعت ہیں یا جن کا سروس ریکارڈ خراب ہے انہیں ہرگز ایس ایچ او نہ لگایا جائے۔ آئی جی پنجاب
لاہور: خراب سروس ریکارڈ اور کریمنل کیسز والے ایس ایچ اوز کو کل تک عہدوں سے ہٹا دیا جائے۔ آئی جی پنجاب
لاہور: جس افسر نے انویسٹی گیشن ونگ یا تھانے میں بطور تفتیشی دو برس کام نہ کیا ہو اسے ایس ایچ او ہر گز نہ لگایا جا ئے۔آئی جی پنجاب
لاہور: ایس ایچ او کو تین ماہ سے پہلے عہدے سے ہٹانے سے قبل متعلقہ افسران کو آرپی اوز سے اجازت لینا ہوگی۔ آئی جی پنجاب
لاہور: سی سی پی او لاہورسمیت تمام آر پی اوز، سی پی اوز اور ڈی پی اوز ان ہدایات کے تحت یس ایچ او زکی تعیناتی یقینی بنائیں۔ آئی جی پنجاب
لاہور: ایس ایچ اوز کی تعیناتی بارے جاری گائیڈ لائنز سے انحراف پر متعلقہ افسران کو ہر صورت جواب دہ ہونا پڑے گا۔ آئی جی پنجاب
لاہور: کانسٹیبل سے لے کر آفیسر لیول تک جس پر اہلکار یا افسر پر ایف آئی آر درج ہوگی اسے فوری طور پر معطل کیا جائے۔ آئی جی پنجاب
لاہور: متعلقہ افسر مقدمہ سے بری ہونے تک معطل ہی رہے گا۔ آئی جی پنجاب

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں