کمیونٹی پولیسنگ پر عمل پیرا رہتے ہوئے بچھڑوں کو اپنوں سے ملانے کی روایت برقرار۔

ڈی آئی جی انویسٹی گیشن لاہور شارق جمال خان نے تمام ڈویژنل ایس پیز کو کمیونٹی پولیسنگ کی پالیسی پر عمل پیرارہ کرگمشدہ افراد کو تلاش کرنے کے احکامات جاری کیے تھے۔جس پر ایس ایس پی انویسٹی گیشن پولیس لاہور عبدالغفار قیصرانی کی سربراہی میں انچارجز انویسٹی گیشن ہنجر وال، ستوکتلہ اور کو ٹ لکھپت نے مغویان 10سال کا علی، 16سال کا دانش، 16سال کا ارشد،22سال کی آمنہ، 6سال کا حسنین،2سال کا شازین اور 8ماہ کی رامین کو تلاش کرکے ورثاء کے سپرد کر دیا ہے۔
ایس ایس پی انویسٹی گیشن لاہور کے مطابق مغوی علی اور دانش گھریلو ناراضگی کی وجہ سے بغیر بتائے اپنے گھروں سے چلے گئے تھے اور مغویہ آمنہ شوہر سے لڑائی کے بعد 3بچوں حسنین، شازین اور رامین کو لے کر گھر سے چلی گئی تھی جبکہ مغوی ارشد گونگا بہرہ ہے اور بغیر بتائے گھر سے گجرات چلا گیا تھا۔ مغویان کے ورثاء نے تھانہ جات میں اغواء کے مقدمات درج کروا رکھے تھے۔ ایس ایس پی انویسٹی گیشن لاہور نے مزید کہاکہ شہریوں کی شکایات پرفوری مقدمات کا اندراج پولیس کی اولین ترجیح ہے شہریوں سے درخواست ہے کہ وہ مکمل چھان بین کے بعد قانونی کارروائی کروائیں۔ڈی آئی جی انویسٹی گیشن لاہور کی طرف سے مغویان کی بحفاظت بازیابی پر پولیس ٹیمز کو شاباش

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں