یہ لڑائی بنیادی طور پر انا کی لڑائی بن چکی ہے

‏علی حیدر گیلانی کی وڈیو سامنے آنے پر خود گیلانی خاندان اور پیپلز پارٹی دباؤ میں آ گئے تھے کہ ان کو فوری طور پر پریس کانفرنس کرنی پڑ گئی اور ہریس کانفرنس میں وہ اعتراف بھی کر گئے لیکن سلام ہے الیکشن کمیشن پر جو کسی قانونی دباؤ میں نہیں آیا اور PDM کے ووٹ خریدنے کے اصولی موقف کے ساتھ سیسہ پلائ دیوار بن گیا۔۔

یہ لڑائی بنیادی طور پر انا کی لڑائی بن چکی ہے اور یہ لڑائی الیکشن کمیشن اور سپریم کورٹ کے درمیان ہے۔۔سپریم کورٹ نے خدشہ ظاہر کیا تھا کہ کرپٹ پریکٹس کو فروغ ملے گا لیکن الیکشن کمیشن اپنی ضد پر اڑا رہا۔اب الیکشن کمیشن اپنے منہ سے اس کے خلاف کیسے فیصلہ کرے کیونکہ اگر الیکشن کمیشن یوسف رضا گیلانی کو قصور وار ٹھہراتا ہے تو الیکشن کمیشن پر توہین عدالت لگتی ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں