ادرک روزمرہ کی خوراک کا لازمی جُز کیوں ہونا چاہیے؟

1) ہاضمہ اور متلی
ادرک ہمیشہ ہاضمہ کے مسائل اور پیٹ کے درد میں مبتلا لوگوں کے علاج کے لئے استعمال ہوتا رہا ہے۔ یہ متلی اور اُلٹی کو کم کرنے کے لئے بھی استعمال کیا جاسکتا ہے جو عام طور پر حمل کے دوران اور سرجری اور کیمو تھراپی جیسے طبی علاج کے بعد درپیش آتی ہے۔

2) موسمِ سرما کی عام بیماریوں کا علاج
ادرک ہمیشہ سے ہی سرد موسم کی بیماریوں کے علاج کیلئے نمبر1 گھریلو علاج رہا ہے۔ تازہ ادرک کھانے سے فرد کے سانس کے نظام کو تقویت ملتی ہے اور وہ عام سردی کے فلو وائرس سے محفوظ رہ سکتا ہے۔

3) منہ میں اور زبان پر موجود جراثیم
ادرک میں موجود ایک فعال مرکب جنجولس منہ میں اور زبان پر موجود بیکٹیریا کی افزائش کو روکنے کے لئے جانا جاتا ہے۔ منہ میں اس بیکٹیریا کی افزائش اور پھیلاؤ پیریڈونٹال بیماری کا سبب بن سکتا ہے جو مسوڑوں کی سنگین بیماری ہے۔ ادرک نہ صرف بیکٹیریا کو ختم کرتا ہے بلکہ یہ آپ کے دانتوں کو بھی چمکاتا ہے۔

4) انفیکشن
ادرک میں موجود ضروری تیل اینٹی سوزش کی حیثیت سے کام کرتے ہیں اور انفیکشن کے خلاف لڑتے ہیں۔ اس لحاظ سے یہ مختلف ادویات کا ایک زبردست متبادل ہے۔

5) ذیابیطس اور کولیسٹرول
2014 میں شائع ہونے والی ایک تحقیق میں یہ ثابت ہوا کہ ٹائپ 2 ذیابیطس والے افراد جنہوں نے 12 ہفتوں کے لئے روزانہ 1600 ملی گرام ادرک پاؤڈر لیا ان میں نہ صرف انسولین کی حساسیت بہتر ہوئی بلکہ کُل کولیسٹرول اور ٹرائگلیسیرائڈز میں بھی کمی واقع ہوئی۔

6) کینسر
ادرک کو اینٹی آکسیڈینٹ کا پاور ہاؤس سمجھا جاتا ہے اور مختلف مطالعات نے یہ ثابت کیا ہے کہ کسی کی غذا میں ادرک کا اضافہ آکسیکٹیٹو تناؤ کو مؤثر طریقے سے کم کرسکتا ہے۔ آکسیڈیتیو زہریلے مادے ہیں جو جسم میں تحول کے ذریعے تشکیل پاتے ہیں۔ اگر اس کا خاتمہ نہیں کیا جائے تو اس کی وجہ سے خلیوں کو نقصان پہنچ سکتا ہے جو بالآخر کینسر کا سبب بن سکتا ہے۔

7) پٹھوں کا درد
اگرچہ ادرک آپ کے پٹھوں کے علاج کے طور پر کام نہیں کرتا ہے لیکن یہ لمبے عرصے تک تکلیف کو کم کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ مطالعات سے معلوم ہوا ہے کہ جن افراد نے اپنی روز مرہ کی غذا کے حصے کے طور پر ادرک کو شامل کیا تھا ان میں اگلے دن بوجھل پٹھوں کا امکان کم تھا۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں