افضل الذکر کیا ہے

✒✒ایک وقت ایسا آئے گا کہ کائنات میں ذکر اللہ رک جائے گا مگر ذکر رسول بے انتہا و بلا تعطل ہوتا رہے گا۔

کیونکہ، اللہ اللہ کرنے والی مخلوق “کُلُّ مَنْ عَلَیْھَا فَانْ” کے تحت ایک دن ختم ہو جائے گی تو ذکر اللہ کرنے والا کوئی نہ ہوگا۔

لیکن ذکر رسول ﷺ کرنے والی ذات ھو الحی القیوم “وَیَبْقٰی وَجْهُ رَبِّکَ ذُوالْجَلَالِ وَالْاِکْرَامِ” کے ساتھ ہمیشہ رہے گی لہذا ذکر رسول ﷺ کرنے والا تب بھی موجود ہوگا۔

مخلوق نہ ہوتی تب بھی وہ ذات اپنی کبریائی و بڑائی کے لئے کسی شے کی محتاج نہیں، تو ثابت ہوا کہ کائنات در حقیقت ذکر رسول ﷺ کے لئے ہی وجود میں لائی گئی اور ذکر رسول ﷺ سب سے پہلے خود حی و قیوم نے “فَخَلَقْتُ نُوْرَ مُحَمَّدٍ” کے ذریعے فرمایا،
“اَوَّلُ مَا خَلَقَ اللّٰہُ نُوْرِیْ” نے ثابت کیا کہ خالق کو خالق و مالک ہونے میں کسی کی محتاجی نہیں تو مقصودِ کائنات فقط ذکر رسول ﷺ ہے۔

اگر ذکر اللہ نہ ہوگا تو نہ ہو، رب کو اس کی پرواہ نہ حاجت، لیکن ذکر رسول ﷺ ہوا، ہورہا ہے اور ہوگا !
کیونکہ اس ذکر کو کرنے والا موجود تھا، ہے اور رہے گا۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں