یہود کےلئے منافقین کی سرگرمیاں

اس موقع پر یہود کی حمایت میں منافقین نے بھی خاصی تگ ودو کی، چنانچہ رأس المنافقین عبد اللہ بن ابی نے یہودِ خیبر کو یہ پیغام بھیجا کہ اب محمد ﷺ نے تمہارا رُخ کیا ہے، لہٰذا چوکنا ہوجاؤ،تیاری کرلو اور دیکھو! ڈرنا نہیں، کیونکہ تمہاری تعداد اور تمہارا سازوسامان زیادہ ہے اور محمد ﷺ کے رفقاء بہت تھوڑے اور تہی دست ہیں اور ان کے پاس ہتھیار بھی بس تھوڑے ہی سے ہیں۔

جب اہلِ خیبر کو اس کا علم ہوا تو انہوں نے کنانہ بن ابی الحقیق اور ہوذہ بن قیس کو حصولِ مدد کے لیے بنو غطفان کے پاس روانہ کیا، کیونکہ وہ خیبر کے یہودیوں کے حلیف اور مسلمانوں کے خلاف ان کے مدد گار تھے، یہود نے یہ پیشکش بھی کی کہ اگر انہیں مسلمانوں پر غلبہ حاصل ہوگیا تو خیبر کی نصف پیداوار انہیں دی جائے گی۔

رسول اللہﷺ نے خیبر جاتے ہوئے جبل عِصْر کو عبور کیا، عِصْر کے عین کو زیر ہے اور ص ساکن ہے اور کہا جاتاہے کہ دونوں پر زبر ہے۔ پھر وادیٔ صہباء سے گزرے، اس کے بعد ایک اور وادی میں پہنچے جس کا نام رجیع ہے، (مگر یہ وہ رجیع نہیں جہاں عضل وقارہ کی غداری سے بنو لحیان کے ہاتھوں آٹھ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کی شہادت اور حضرت زید وخبیب رضی اللہ عنہما کی گرفتاری اور پھر مکہ میں شہادت کا واقعہ پیش آیا تھا )۔

رجیع سے بنو غطفان کی آبادی صرف ایک دن اور ایک رات کی دوری پر واقع تھی اور بنو غطفان نے تیار ہوکر یہود کی اِمداد کے لیے خیبر کی راہ لے لی تھی، لیکن اثنائے راہ میں انہیں اپنے پیچھے کچھ شور وشغب سنائی پڑا تو انہوں نے سمجھا کہ مسلمانوں نے ان کے بال بچوں اور مویشیوں پر حملہ کردیا ہے، اس لیے وہ واپس پلٹ کر آگئے اور خیبر کو مسلمانوں کے لیے آزاد چھوڑ دیا۔

اس کے بعدرسول اللہ ﷺ نے ان دونوں ماہرینِ راہ کو بلایا جو لشکر کو راستہ بتانے پر مامور تھے، ان میں سے ایک کا نام حسیل تھا، ان دونوں سے آپ نے ایسا مناسب ترین راستہ معلوم کرنا چاہا جسے اختیار کرکے خیبر میں شمال کی جانب سے یعنی مدینہ کے بجائے شام کی جانب سے داخل ہوسکیں، تاکہ اس حکمت عملی کے ذریعے ایک طرف تو یہود کے شام بھاگنے کا راستہ بند کردیں اور دوسری طرف بنو غطفان اور یہود کے درمیان حائل ہوکر ان کی طرف سے کسی مدد کی رسائی کے امکانات ختم کردیں۔

ایک راہنما نے کہا: اے اللہ کے رسول! میں آپ کو ایسے راستے سے لے چلوں گا، چنانچہ وہ آگے آگے چلا، ایک مقام پر پہنچ کر جہاں متعدد راستے پھوٹتے تھے، عرض کیا: یا رسول اللہ! ان سب راستوں سے آپ منزل مقصود تک پہنچ سکتے ہیں۔ آپ ﷺ نے فرمایا کہ وہ ہر ایک کا نام بتائے۔ اس نے بتایا کہ ایک کا نام حَزن (سخت اور کھردرا) ہے۔ آپ ﷺ نے اس پر چلنا منظور نہ کیا، اس نے بتایا: دوسرے کانام شاش (تفرق واضطراب والا) ہے، آپ نے اسے بھی منظور نہ کیا، اس نے بتایا: تیسرے کا نام حاطب (لکڑہارا ) ہے، آپ نے اس پر بھی چلنے سے انکار کردیا۔ حُسَیْل نے کہا: اب ایک ہی راستہ باقی رہ گیا ہے۔ حضرت عمرؓ نے فرمایا: اس کا نام کیا ہے ؟ حُسیل نے کہا: مرحب۔ نبی ﷺ نے اسی پر چلنا پسند فرمایا۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں