کورونا کی تیسری لہر

ذرائع کے مطابق.

اسلام آباد: این سی اوسی کی جانب سے ملک کے مختلف شہروں میں کورونا کی مثبت شرح کی وجہ بننے والی سرگرمیوں پر سخت پابندیاں عائد کردی گئی ہیں۔
ایکسپریس نیوزکے مطابق ملک میں کورونا وائرس کے بڑھتے خطرات کے پیش نظر این سی او سی کا خصوصی اجلاس ہوا، جس کی صدارت وفاقی وزیر منصوبہ بندی اسد عمر نے کی، جب کہ تمام چیف سیکرٹریز نے ویڈیو لنک کے ذریعے شرکت کی، این سی او سی نے ملک بھر میں کورونا کی موجودہ صورتحال پر اظہار تشویش کرتے ہوئے متفقہ طور پر ایس او پیز پر سختی سے عملدرآمد یقینی بنانے کا فیصلہ کیا گیا۔
اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ خیبرپختون خوا، پنجاب اور گلگت بلستان کے متعدد شہروں میں ایمرجنسی کے علاوہ نقل و حرکت پر سخت پابندیاں عائد کردی گئیں، ہوٹل اور ریسٹورنٹس میں ہر قسم کی ان ڈور ڈائننگ پر پابندی ہوگی، ہفتے میں دو روز کمرشل سرگرمیاں بند رہیں گی، جب کہ دو روز تعطیل کا فیصلہ وفاق اور صوبے خود کریں گے۔
این سی او سی کے مطابق مذہبی و سیاسی اجتماعات پر مکمل جب کہ شادی بیاہ کی تقریبات کے ان ڈور انعقاد پر پابندی ہوگی، کھیلوں اور سماجی تقریبات پر مکمل پابندی ہوگی، تفریحی پارک مکمل طور پر بند رہیں گے، جب کہ واکنگ اور جاگنگ ٹریکس ایس او پیز کے ساتھ کھلے رکھنے کی اجازت ہوگی۔
این سی او سی کے اعلامیے میں بتایا گیا ہے کہ یہ پالیسی 11 اپریل تک نافذ العمل رہے گی اور 7 اپریل کو این سی او سی میں جائزہ لیا جائے گا کہ ان پابندیوں پر اطلاق جاری رہے گا یا ان میں نرمی کی جائے گی، جب کہ تعلیمی اداروں سے متعلق فیصلہ 24 مارچ کو این سی او سی اجلاس میں ہوگا۔
وفاقی وزیر منصوبہ بندی اسد عمر کی ٹویٹ
اس سے قبل سماجی رابطے کی ویٹ سائٹ ٹویٹر پر اپنی ٹویٹ میں اجلاس میں ہونے والے فیصلوں کے حوالے سے وفاقی وزیر اسد عمر کا کہنا تھا کہ آج این سی او سی کے اجلاس میں ہم نےان تمام سرگرمیوں پر پابندیوں میں اضافے کا فیصلہ کیا ہےجن سےکوروناکیسزمیں تیزی سے اضافہ ہوتا ہے۔
وفایق وزیر نے کہا کہ اسلام آباد اورصوبائی انتظامیہ کو بھی ہدایت کی گئی ہے کہ وہ ایس اوپیزپرسختی سےعملدرآمدکرائیں، جس کی خلاف ورزی کرنےوالوں کےخلاف کریک ڈاون کی ہدایت بھِی کی گئی ہے۔
دوسری جانب وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید نے بھی اپنے ویڈیو پیغام میں کورونا کی تیسری لہر میں شدت کے حوالے سے ایس اوپیز پر سختی سے عمل کروانے پر زور دیا اور کہا کہ ایس او پیز پرعملدرآمد نہ کرنے پرقانونی کارروائی ہوگی۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں