آنکھوں سے پلایا جانے والا شراب

حدیث پاک میں ہے کہ نبی علیہ الصلوٰۃ والسلام نے ارشاد فرمایا

لَعَنَ اللّٰہُ النَّاظِرَ والمَنظُورَ اِلَیہِ . ( بیہقی۔ مشکٰوة 270 )

ترجمہ : اللہ تعالی لعنت کرتے ہیں بدنظری کرنے والے مرد اور بدنظری کرنے والی عورت پر

حضرت داؤد علیہ السلام نے اپنے بیٹے کو نصیحت فرمائی کے شیر اور اژدھے کے پیچھے چلے جانا ، مگر کسی عورت کے پیچھے ہرگز نہ جانا ، مقصد یہ ہے کہ شیر اور اژدھا پلٹ آیا تو موت کے مُنہ میں چلے جاؤ گے ، اگر عورت پلٹ آئی تو جہنم کے مُنہ میں چلے جاؤ گے ۔

حضرت یحییٰ بن زکریا علیہ السلام سے لوگوں نے پوچھا کہ زنا کی ابتدا کہاں سے ہوتی ہے ؟ فرمایا آنکھوں سے ۔

حضرت عمر فاروق رضی اللہ تعالی عنہ نے فرمایا کہ اگر دو بوسیدہ ہڈیاں بھی خلوت میں تنہا ہوں تو ایک دوسرے کا قصد کریں گی

( بوسیدہ ہڈیوں سے مراد بوڑھا مرد اور بوڑھی عورت ہے )

حضرت سعید بن المسیب رحمۃ اللہ علیہ نے فرمایا کہ جب تم کسی کو دیکھو کہ وہ نو عمر لڑکے کی طرف نظر جما کر دیکھ رہا ہے تو سمجھ لو کہ دال میں کچھ کالا ہے ۔

فتح موصلی رحمۃ اللہ علیہ فرمایا کرتے تھے کہ میں 30 مشائخ سے ملا ہوں ، جو ابدال شمار کیے جاتے ہیں ہر ایک نے مجھے رخصت کے وقت وصیت کی کہ نوعمروں کی ہم نشینی سے بچتے رہنا ۔

ابن ظاہر مقدسی رحمۃ اللہ علیہ فرمایا کرتے تھے کہ جس شخص کی شہوت کسی مرد کو دیکھنے سے بھڑکے تو اس کے لئے اس مرد کو دیکھنا حرام ہے ۔

امام غزالی رحمۃ اللہ علیہ نے فرمایا کرتے تھے کہ مجھ پر پھاڑ کھانے والا شیر جھپٹے تو میں اتنا نہیں ڈرتا جتنا نو عمر لڑکوں کی ہم نشینی سے ڈرتا ہوں ۔

حضرت مولانا خلیل احمد سہارنپوری رحمۃ اللہ علیہ فرمایا کرتے تھے کہ بدنظری کرنا قوت حافظہ کے لئے زہر قاتل کی مانند ہے ۔

حضرت مجدد الف ثانی رحمۃ اللہ علیہ اپنے مکتوبات میں لکھتے ہیں کہ جس شخص کی نظر قابو میں نہیں ، اس کا دل قابو میں نہیں اور جس کا دل قابو میں نہیں ، اس کی شرمگاہ قابو میں نہیں رہے گی ۔

بدنظری کا علاج

دور حاضر میں انٹرنیٹ ، ٹی وی اور وی سی آر کی وجہ سے گھر گھر میں فلمیں ڈرامے عام ہوگئے ہیں ، عریانی وفحاشی کا سیلاب امڈ آیا ہے ، جوان العمر عورتیں بن ٹھن کر بے پردہ گلی بازاروں میں گھومتی پھرتی ہیں ، اس کی اشتہار بازی کے نام پر سڑکوں کے اطراف میں عورتوں کی جاذب نظر تصاویر آویزاں ہیں ۔ اخبار اور رسائل میں پرکشش تصاویر عام سی بات ہے ۔

ایسے حالت میں نوجوان تو کیا بوڑھوں کے لئے بھی نظر کی حفاظت ایک مصیبت بن گئی ہے ۔ کوشش کے باوجود اس سے نجات کی صورت نظر نہیں آتی ۔ جن لوگوں کے دلوں میں ہدایت کا نور موجود ہے ۔ وہ اس گناہ کے صادر ہونے پر اندر ہی اندر کڑھتے رہتے ہیں ۔ سالکین طریقت اپنے مشائخ سے بدنظری کا علاج معلوم کرتے ہیں ، تاکہ اس بیماری سے شفا نصیب ہو ۔ ضروری معلوم ہوتا ہے کہ قرآن و سنت کی روشنی میں اس بیماری سے شفایاب ہونے کے چند مجرب نسخے پیش کردیے جائیں ، تاکہ نگاہیں حرام سے ہٹ کر حلال کی طرف متوجہ ہوجائیں ۔ شہوت کی بھڑکتی آگ کے شعلے ٹھنڈے ہوں ۔ پاکیزگی اور پاکدامنی کی زندگی گزارنا آسان ہوجائے

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں